blessings

سورۂ نجم کی فضیلت

سورۃ النجم مکّیہ ہے ، اس میں 3 رکوع ، 62 آیتیں، 360 کلمے، 1405 حرف ہیں ۔ یہ وہ پہلی سورت ہے جس کا رسولِ کریم صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے اعلان فرمایا اور حرم شریف میں مشرکین کے رُوبرو پڑھی۔  خزائن العرفان، پ۱۱، ھود، حاشیہ نمبر ۱

Hazrat Umar e Farooq

عدل فاروقى كى گواہى

      خلیفۂ دُوُم، جانَشینِ پیغمبر، وزیرِ نبیِّ اَطہر، حضرتِ سیِّدُنا عُمَر رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ کی کُنْیَت’’ابوحَفْص‘‘ اور لقَب   ’’فاروقِ اَعظم‘‘ہے۔ وہ دور کہ جب عالم اسلام بصورتِ خلافت عدل فاروقی رضى الله عنه سے انصاف کی پیاس بجھا رہا تہا اس دور انصاف میں ایک دن زمین دنیا نے اپنے جاندار ہونے کا بہر پور احساس دلایا اور وہ بحکم خالق المخلوق لرز اٹہی ،عدل و انصاف کے پیکر خلیفہ وقت حضرت عمر فاروق رضى الله عنه نے اپنے خالق واحد کی حمد و ثناء کو ورد زباں فرمایا ,ابہی زمین لرز رہی تہی اور اس سے آواز بہی بلند ہو رہی تہی کہ بحر عدل و انصاف حضرت عمر فاروق رضى الله عنه نے درہ فاروقی کو حرکت دی اور زمین دنیا پر ضرب لگائی اور اس سے ہم کلام ہو کر فرمایا :اے زمین! ٹہر کیا میں تجہ پر عدل نہیں کرتا ؟؟؟اور آپ کے عدل کا تو خود خدا بہی شاہد ہے اس کلام کا آپکے لبہاے مبارکہ سے جاری ہونا تہا کہ زمین نے اسکی تصدیق کی اور ٹہر گئی

↵………

Bint e Faisal Attari                                    

Hazrat Samama

خاتَمُ الْمُرْسَلین، رَحْمَۃٌ لّلْعٰلَمِیْن صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی ایک  ﻧﻈﺮ سے کافِر ایمان سے مُشرَّف ہوگئے

ﻧﮉﺭ ﺗﮭﺎ، ﺟﺮﻧﯿﻞ ﺗﮭﺎ، ﺗﺎﺟﻮﺭ ﺗﮭﺎ، ﮔﻮﺭﻧﺮ ﺗﮭﺎ، ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﻻﯾﺎ ﮔﯿﺎ،
ﻣﺴﺠﺪ ﻧﺒﻮﯼ ﻣﯿﮟ ﺳﺘﻮﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﺎﻧﺪﮪ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ،
ﺭﺳﻮﻝ ﭘﺎﮎ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭ ﺳﻠﻢ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻟﮯ ﮔﺌﮯ،، ﺩﯾﮑﮭﺎ، ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﭼﮩﺮﮦ، ﻟﻤﺒﺎ ﻗﺪ، ﺗﻮﺍﻧﺎ ﺟﺴﻢ، ﺑﮭﺮﺍ ﮨﻮﺍ ﺳﯿﻨﮧ، ﺍﮐﮍﯼ ﮨﻮﺋﯽ ﮔﺮﺩﻥ، ﺍﭨﮭﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﻧﮕﺎﮨﯿﮟ، ﺗﻤﮑﻨﺖ، ﺷﺎﻥ ﻭ ﺷﻠﻮﮦ، ﺳﻄﻮﺕ، ﺷﮩﺮﺕ ﮨﮯ،
ﺣﮑﻤﺮﺍﻧﯽ ﮐﮯ ﺟﺘﻨﮯ ﻋﯿﺐ ﮨﯿﮟ ﺳﺎﺭﮮ ﭘﺎﺋﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ،
ﺳﺮﻭﺭ ﺭﺳﻮﻻﮞ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭ ﺳﻠﻢ ﺁﮔﮯ ﺑﮍﮬﮯ، ﮐﮩﺎ
ﺛﻤﺎﻣﮧ ! ﮐﯿﺴﮯ ﮨﻮ؟
ﺛﻤﺎﻣﮧ ﺑﻮﻻ : ﮔﺮﻓﺘﺎﺭ ﮐﺮﮐﮯ ﭘﻮﭼﮭﺘﮯ ﮨﻮ ﮐﯿﺴﺎ ﮨﻮﮞ،
ﺭﺳﻮﻝ ﭘﺎﮎ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭ ﺳﻠﻢ نے ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ : ﮐﻮﺋﯽ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﭘﮩﻨﭽﯽ ﮨﻮ؟
ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ : ﻧﮧ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﭘﺮﻭﺍﮦ، ﻧﮧ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﺭﺍﺣﺖ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﺪﺷﮧ، ﺟﻮ ﺟﯽ ﭼﺎﮨﮯ ﮐﺮ ﻟﻮ،
ﺭﺳﻮﻝ ﭘﺎﮎ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭ ﺳﻠﻢ نے ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ : ﺑﮍﺍ ﺗﯿﺰ ﻣﺰﺍﺝ ﺁﺩﻣﯽ ﮨﮯ،
ﺍﭘﻨﮯ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ، ﭘﻮﭼﮭﺎ، ﺍﺱ ﮐﻮ ﺩﮐﮫ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﮩﻨﭽﺎﯾﺎ؟
ﻋﺮﺽ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﯾﺎ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭ ﺳﻠﻢ ! ﮔﺮﻓﺘﺎﺭ ﮨﯽ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﺩﮐﮫ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﮩﻨﭽﺎﯾﺎ،
ﭘﯿﮑﺮ ﺣﺴﻦ ﻭ ﺟﻤﺎﻝ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ : ﺛﻤﺎﻣﮧ ﺫﺭﺍ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺁﻧﮑﮫ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﻮ ﺗﻮ ﺳﮩﯽ،
ﺛﻤﺎﻣﮧ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ : ﮐﯿﺎ ﻧﻈﺮ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮ، ﺟﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ، ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﻣﺎﺭﺍ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ ﺗﻮ ﻣﯿﺮﮮ ﺧﻮﻥ ﮐﺎ ﺑﺪﻟﮧ ﻟﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ،
ﺟﺒﺮﺍﺋﯿﻞ ﺑﮭﯽ ﻏﯿﻆ ﻭ ﻏﻀﺐ ﻣﯿﮟ ﺁ ﮔﺌﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ، ﻋﻤﺮ ﻓﺎﺭﻭﻕ( رضی اللّٰہ )ﮐﯽ ﭘﯿﺸﺎﻧﯽ ﺳﻠﻮﭨﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﺮ ﮔﺌﯽ، ﺗﻠﻮﺍﺭ ﮐﮯ ﻣﯿﺎﻥ ﭘﺮ ﮨﺎﺗﮫ ﺗﮍﭘﻨﮯ ﻟﮕﺎ،
ﺍﺷﺎﺭﮦ ﺍﺑﺮﻭ ﮨﻮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﮔﺮﺩﻥ ﮨﻮ ﻣﺤﻤﺪ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭ ﺳﻠﻢ ﮐﮯ ﻗﺪﻡ ﮨﻮﮞ، ﯾﮧ ﮐﯿﺎ ﺳﻤﺠﮭﺘﺎ ﮨﮯ،
ﻟﯿﮑﻦ ﺭﺣﻤۃ ﻟﻠﻌﺎﻟﻤﯿﻦ ﮐﮯ ﮨﻮﻧﭩﻮﮞ ﭘﺮ ﻣﺴﮑﺮﺍﮨﭧ ﮨﮯ، ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ، ﺟﺘﻨﺎ ﻏﺼﮧ ﮨﮯ ﺟﯽ ﭼﺎﮨﮯ ﻧﮑﺎﻝ ﻟﻮ، ﻟﯿﮑﻦ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﭼﮩﺮﮦ ﺗﻮ ﺩﯾﮑﮫ ﻟﻮ،
ﺛﻤﺎﻣﮧ ﻧﮯ ﮐﯿﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ : ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﺪﯾﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ، ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ، ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﭼﮩﺮﮦ ﮐﯿﺎ ﺩﯾﮑﮭﻮﮞ ﮐﺎﺋﻨﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﺗﺠﮫ ﺳﮯ ﺑﺪ ﺻﻮﺭﺕ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ( ﻧﻌﻮﺫﺑﺎﻟﻠﮧ )
ﺍﺱ ﮐﻮ ﮐﮩﺎ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺗﮭﺎ :
”ﺣﺴﻦ ﯾﻮﺳﻒ ﺩﻡ ﻋﯿﺴﯽ ﯾﺪ ﺑﯿﻀﺎﻭﺭﯼ
ﺁﻧﭽﮧ ﺧﻮﺑﺎﮞ ﮨﻤﮧ ﺩﺍﺭﻧﺪ ﺗﻮ ﺗﻨﮩﺎﺩﺍﺭﯼ”
ﻟﻮﮔﻮ ! ﯾﮧ ﮨﮯ ﻭﮦ ﭘﯿﻐﻤﺒﺮ ﺭﺣﻤۃ ﻟﻠﻌﺎﻟﻤﯿﻦ ﺟﺲ ﮐﮯ ﻧﻘﺶ ﻗﺪﻡ ﭘﺮ ﺗﻢ ﻧﮯ ﭼﻠﻨﺎ ﮨﮯ، ﺟﺐ ﺑﮯ ﺁﺳﺮﺍ ﺗﮭﺎ ﺗﺐ ﺑﮭﯽ ﮔﺎﻟﯿﺎﮞ ﮐﮭﺎﺋﯽ، ﺷﮑﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﮈﺍﻟﯽ، ﺁﺝ ﺗﺎﺟﺪﺍﺭ ﺗﮭﺎ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﮔﺎﻟﯽ ﺳﻨﺘﺎ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﭘﯿﺸﺎﻧﯽ ﭘﺮ ﺷﮑﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﮈﺍﻟﺘﺎ ﮨﮯ،
ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ : ﮐﻮﺋﯽ ﺑﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ، ﻣﯿﺮﯼ ﺑﺴﺘﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺗﻮ ﻧﮕﺎﮦ ﮈﺍﻟﻮ،
ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ : ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺭﻭﻡ ﻭ ﯾﻮﻧﺎﻥ ﺍﯾﺮﺍﻥ ﻭ ﻣﺼﺮ ﮐﯽ ﺑﺴﺘﯿﺎﮞ ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ ﻣﮕﺮ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﺑﺴﺘﯽ ﮐﺎﺋﻨﺎﺕ ﮐﯽ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﺪﺻﻮﺭﺕ ﺑﺴﺘﯽ ﮨﮯ ( ﻧﻌﻮﺫﺑﺎﻟﻠﮧ )
ﺍﺱ ﺑﺴﺘﯽ ﮐﻮ ﮐﯿﺎ ﺩﯾﮑﮭﻮﮞ؟
ﺭﺣﻤۃ ﻟﻠﻌﺎﻟﻤﯿﻦ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭ ﺳﻠﻢ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ،
ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺩﻥ ﺁﺋﮯ ﭘﮭﺮ ﻭﮨﯽ ﺟﻮﺍﺏ،
ﺗﯿﺴﺮﮮ ﺩﻥ ﭘﺎﮎ ﭘﯿﻐﻤﺒﺮ ﺁﺋﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ : ﮨﻢ ﺗﺠﮫ ﺳﮯ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﺎﻧﮕﺘﮯ، ﺫﺭﺍ ﺩﯾﮑﮫ ﺗﻮ ﻟﻮ،
ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ : ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ، ﺍﺏ؟
ﺁﺳﻤﺎﻥ ﮔﻮﺵ ﺑﺮ ﺁﻭﺍﺯ ﺗﮭﮯ،
ﺯﻣﯿﻦ ﺳﮩﻤﯽ ﭘﮍﯼ ﺗﮭﯽ، ﺁﺳﻤﺎﻥ ﺳﺎﮐﻦ ﺗﮭﺎ ﺑﯿﭽﺎﺭﮦ،
ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ ! ﺁﺝ ﺍﺱ ﻧﺒﯽ ﺭﺣﻤﺖ ﮐﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﺣﮑﻢ ﺻﺎﺩﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ، ﺍﺱ ﮔﺴﺘﺎﺥ ﮐﻮ ﮐﯿﺎ ﺳﺰﺍ ﻣﻠﺘﯽ ﮨﮯ،
ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ، ﮐﺎﺋﻨﺎﺕ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ، ﺁﺳﻤﺎﻥ ﻃﯿﺒﮧ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ، ﻣﺴﺠﺪ ﻧﺒﻮﯼ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ، ﺍﺱ ﺳﺘﻮﻥ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺛﻤﺎﻣﮧ ﺑﻨﺪﮬﺎ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ،
ﺍﺏ ﺣﮑﻢ ﺻﺎﺩﺭ ﮨﻮ ﮔﺎ ﺍﺱ ﮐﯽ ﮔﺮﺩﻥ ﺍﮌ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ،
ﻣﮕﺮ
ﮨﻤﯿﺸﮧ ﻣﺴﮑﺮﺍﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﭘﺎﮎ ﭘﯿﻐﻤﺒﺮ ﻣﺴﮑﺮﺍﯾﺎ، ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ : ﺟﺎﺅ ! ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺎ ﮨﮯ ﭼﻠﮯ ﺟﺎﺅ، ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﯾﺴﮯ ﺭﮨﺎ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﮨﮯ، ﮨﻢ ﺗﺠﮭﮯ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮩﺘﮯ ﺗﻮ ﺑﮍﺍ ﺁﺩﻣﯽ ﮨﮯ، ﺑﮍﮮ ﻣﻠﮏ ﮐﺎ ﺣﮑﻤﺮﺍﻥ ﮨﮯ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﮨﻢ ﺗﺠﮭﮯ ﮐﯿﺎ ﮐﮩﯿﮟ ﮔﮯ، ﺟﺎﺅ
ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﮐﺮﺍﻡ ﮐﻮ ﺟﻦ ﮐﯽ ﺗﻠﻮﺍﺭﯾﮟ ﺛﻤﺎﻣﮧ ﮐﯽ ﮔﺮﺩﻥ ﮐﺎﭨﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﮯ ﺗﺎﺏ ﺗﮭﯿﮟ، ﺍﻧﮑﻮ ﮐﮩﺎ،
ﺑﮍﺍ ﺁﺩﻣﯽ ﮨﮯ ﻋﺰﺕ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻟﮯ ﺟﺎ ﮐﺮ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻣﺪﯾﻨﮧ ﺳﮯ ﺭﺧﺼﺖ ﮐﺮ ﺩﻭ،
ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﭼﮭﻮﮌﺍ، ﭘﻠﭩﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺧﯿﺎﻝ ﺁﯾﺎ، ﺑﮍﮮ ﺣﮑﻤﺮﺍﻥ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ، ﻣﺤﮑﻮﻡ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ، ﺟﺮﻧﯿﻞ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﮐﺮﻧﯿﻞ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ، ﺻﺪﺭ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﮐﻤﺎﻧﮉﺭ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ، ﺍﺗﻨﺎ ﺣﻮﺻﻠﮧ ﻭﺍﻻ ﺗﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﻧﮧ ﺩﯾﮑﮭﺎ،
ﺍﺱ ﮐﮯ ﭼﮩﺮﮮ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﻮﮞ ﮨﮯ ﮐﯿﺴﺎ
” ﺑﺲ ﺍﮎ ﻧﮕﺎﮦ ﭘﮧ ﭨﮭﮩﺮﺍ ﮨﮯ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺩﻝ ﮐﺎ “
ﭘﮭﺮ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﮨﮯ، ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺳﺮﭘﭧ ﺑﮭﺎﮔﺎ، ﺩﮌﮐﯽ ﻟﮕﺎ ﺩﯼ، ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ
ﺁﮔﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮩﺘﺎ ﺛﻤﺎﻣﮧ ﺳﮯ ﺳﻨﯿﮟ ! ﻭﮦ ﮐﯿﺎ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ
ﮐﮩﺎ، ﻗﺪﻡ ﺁﮔﮯ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﮭﺎﮒ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﺩﻝ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﮭﺎﮒ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ
ﺩﻭ ﻣﯿﻞ ﺑﮭﺎﮔﺘﺎ ﭼﻼ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺟﺘﻨﯽ ﺭﻓﺘﺎﺭ ﺳﮯ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺩﮔﻨﯽ ﺭﻓﺘﺎﺭ ﺳﮯ ﻭﺍﭘﺲ ﭘﻠﭧ ﺁﯾﺎ،
ﻭﮦ ﻣﺎﮦ ﺗﻤﺎﻡ ﻧﻨﮕﯽ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ، ﺍﭘﻨﮯ ﯾﺎﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻧﻨﮕﯽ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ،
ﺻﺤﻦ ﻣﺴﺠﺪ ﭘﺮ ﻧﻨﮕﮯ ﻓﺮﺷﻮﮞ ﭘﺮ ﺁﯾﺎ،
ﻧﺒﯽ ﮐﺮﯾﻢ ﻧﮯ ﻧﮕﺎﮦ ﮈﺍﻟﯽ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺛﻤﺎﻣﮧ ﮐﮭﮍﺍ ﮨﮯ، ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺗﻮ ﺗﺠﮭﮯ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺎ ﺗﮭﺎ ﭘﮭﺮ ﺁ ﮔﺌﮯ؟
ﮐﮩﺎ، ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﺎ ﺑﻨﺎ ﮐﺮ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺎ، ﮐﯿﺎ ﺍﺳﯿﺮﯼ ﮨﮯ ﮐﯿﺎ ﺭﮨﺎﺋﯽ ﮨﮯ،
ﭼﮭﻮﮌﺍ ﺗﺐ ﺗﮭﺎ ﺟﺐ ﺁﭖ ﮐﺎ ﭼﮩﺮﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﮭﺎ، ﺍﺏ ﺁﭖ ﮐﺎ ﭼﮩﺮﮦ ﺩﯾﮑﮫ ﻟﯿﺎ، ﺍﺏ
ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺑﮭﺮ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺁﭖ ﮐﺎ ﻏﻼﻡ ﺑﻦ ﮔﯿﺎ ﮨﻮﮞ……
۔۔۔
حضرت ثمامہ رضی اللہ عنہ
الاصابتہ فہ تصیزالصحابہ۔ابن حجر104/1
الاستعیاب فی اسما الاصحاب 305/1
سیرت ابن ہشام

 
 

Hazrat Imam Abu Hanifa

Hazrat Imam Abbu Hneefaاخلاق حمیدہ کے پیکر امام الائمه،سراج الامہ،سید الفقهاء،علوم دينيه ميں اماموں کے امام امام أعظم ابوحنيفه رحمة الله عليه:انتہائی پاکیزہ فطرت اور بہترین عادات کے حامل اور سچائی،انصاف پسندی،امنت ودیانت،عاجزی وانکساری آپکی ذات شریفہ کا حصہ تھیں … آپ ہمیشہ اپنے چہرہ مبارکہ پر پھول کی مانند مسکراہٹ سجائے رکھتے تھے کہ جسطرح پھول کو دیکھنے والا اپنے اندر راحت خوشی محسوس کرتا ہے اس ہی طرح ان کی طرف نظر کرنے والا اپنے دل میں خوشی محسوس کرتا تھا چونکہ آپ كثير المال تاجر تھے اس لیۓ بہت سے لوگوں کا آپ سے لین دین رہتا اور بہت سے لوگ آپ سے قرض لیتے لکین آپ نے کبھی کسی مقروض سے اسکا تقاضا نہیں کیا ایک دفعہ ایک شخص جس پر آپ رحمة الله عليه کے دس درهم بطور قرض تھے جو کہ بعد ازمدت اب تک ادا کیے تھےاور شاید وہ اب تک اپکے اخلاق حمیدہ کی چاشنی،شفقتکی میٹھاس اور سخاوت کی حلاوت سے مستفیض نہ ہوا تھاکہ آپ رحمة الله عليه کو دیکھ کر روپوش ہوگیا قسمت کی بات ہے وہ گلی دوسری جانب سے سر بستہ (بند)تھی آپ رحمةالله عليه نے اسکی طرف قدم رنجہ فرماۓ اور اس سے چھپنے کی وجہ دریافت کی تو جب اس نے اپنا تمام معاملہ بہر لطف و کرم کے سپرد کیا تو اسکا جواب بھی ہمدردی و غمگساری کی بہترین مثال قائم کرتے ہوے دیا جانا تھا دیکھے کہ امام اعظم ابو حنیفہ رحمة الله عليه نے کیا فرمایا…؟ “کہ میں یہ بات برداشت نہیں کرتا کہ اس نہ باقی رہنے والی دنیا کی فانی دولت کی وجہ سے کسی مومن کا دل پریشان یا کوئی مسلمان مجھ سے دور ہو لہذا میں خدا کو گواہ بناکر تمہيں تمام قرض معاف کرتا ہوں

Bint e Ibn e Jameel